سیلاب اور وعدےSANCH LOGO
تحریر محمد مظہررشید چوہدری 03336963372
ستاسٹھ سال سے موسم برسات کے بعد وطن عزیزپاکستان میں سیلاب اپنی تباہ کاریوں میں اضافہ ہر سال کرتاچلا جا رہا ہے وطن عزیز پر جمہوری طریقہ سے آنے والے حکمران برسراقتدار ہوں چاہے کوئی آمر یہاں کے غریب اورانکے مال مویشی یونہی ہر سال مرتے اور تباہ ہوتے رہے ہیں اس تباہی اور بربادی کے نتیجہ میں بیرونی امداد غریب کے گھر تک با مشکل ہی پہنچ پائی اگر کرپشن کے جادوگروں سے کچھ بچ نکلا تو وہ غریب کی ایک دن کی کمائی سے بھی اسکوکم ملا آپس کی سیاسی لڑائی اور چپقلش نے وطن عزیز میں نہ تو کوئی بڑا ڈیم بننے دیا اور نہ ہی پانی محفوظ کرنے کا کوئی اور طریقہ سامنے آنے دیا ہر سال ہزاروں ایکڑ زمین پر کھڑی فصلیں تباہ کرتا سیلابی ریلا اپنے ساتھ بے شمار دکھ بھری داستانیں چھوڑ جاتا ہے اور غریب بے بس ہر باراس آس میں حکمرانوں کے وعدوں پر اعتبار کر لیتا ہے کہ شاید کسی کو کبھی اللہ تعالی اتنا حوصلہ اور ہمت دے کہ وہ وعدوں کی تکمیل کر جائے کسی ترقی یافتہ ملک کا کوئی فرد یہ تصور بھی نہیں کرسکتا ہوگا کہ جس ملک میں ہر سال ہزاروں ایکڑ زمین سیلابی ریلے کی نظر ہو جاتی ہے وہاں توانائی کا بحران اس شدت سے قائم ہے جس شدت سے پچھلے چند سالوں سے وطن عزیز کا ہر فرد برداشت کر رہا ہے اگر ہماری نیتیں صاف ہوتیں تو آج وطن عزیز میں کم ازکم دو نئے بڑے ڈیم تو بنائے جاسکتے تھے جس سے نا صرف پانی کو محفوظ کیا جاسکتا تھا بلکہ توانائی (بجلی)کو بھی ضرورت سے زائد اور سستا پیدا کیا جا سکتا تھا لیکن افسوس سندھ ،پنجاب میں افسوسناک تباہی پھیلانے والا سیلابی ریلا ایک بار پھر اپنی تمام تر حشر سامانیوں کے ساتھ عید الفطر سے پہلے ہی آچکا تھا لاکھوں لوگ اپنا گھر بار چھوڑ کر اپنی زندگیاں بچانے کے لیے محفوظ پناہ گاہوں کی تلاش میں نکل کھڑے ہوئے ہیں لاکھوں ایکڑ پر کھڑی فصلیں تباہ ہو رہی ہیں مال مویشی جو کہ غریب کی بسر اوقات کا واحد زریعہ ہیں سیلابی ریلے کی نظر ہو رہے ہیں ایک بار پھر این جی اوز اور حکومتی نمائندے طفل تسلیاں دینے کے لیے تباہ حال علاقوں کا دورہ شروع کرنے کو ہیں لاکھوں ڈالرامداد کی توقع رکھے یہ خدمت گارایک بار پھر فوٹو سیشن کروانے کو مکمل تیار ہوچکے ہیں سیلاب سے تباہ حال غریب ایک بار پھر وعدوں کی جھنکار سننے کو تیار کہ آئندہ ایسا نہیں ہوگا لیکن پھر سال ختم ہو جائے گا برسات کا موسم پھر آئے گا اور اپنے ساتھ پھر یہ تباہ کاریاں لائے گا آخر کب ختم ہونگی لاکھوں غریبوں کی آزمائشیں؟کاش وطن عزیز میں اربوں روپے کے پراجیکٹ بنانے والے سیلابی پانی کی تباہ کاریوں میں کمی کے لیے بھی کوئی پراجیکٹ (ڈیم)بنا جائیں ہم یہاں اپنی فوج کے جوانوں کو سلام پیش کرتے ہیں جنھوں نے ہر مشکل گھڑی میں وطن کے مظلوم مصیبت زدہ لوگوں کو مشکلات سے نکالا***