بہادر شاہ ظفر

ار تھا گلزار تھا بادِ صبا میں نہ تھا
لائقِ پا بوسِ جاں کیا حنا تھی میں نہ تھا

ہاتھ کیوں باندھے میرے چھلا اگر چوری ہوا
یہ سراپا شوخئی رنگِ حنا تھی میں نہ تھا

میں نے پوچھا کیا ہوا وہ آپ کا حسن و شباب
ہنس کے بولا وہ صنم شانِ خدا تھی میں نہ تھا

میں سسکتا رہ گیا اور مر گئے فرہاد و قیس
کیا انہیں دونوں کے حصے میں قضا تھی میں نہ تھا