بھارت کا جنگی جنون برقرار، کنٹرول لائن پر مسلسل فائرنگ جاری ہے۔ سیالکوٹ کے چارواہ سیکٹر میں دھمالہ کے مقام پر بھارت فوج کی گولہ باری سے دو شہری زخمی ہو گئے۔

سیالکوٹ: بھارتی فوج کی جانب سے گزشتہ کئی روز سے کنٹرول لائن پر گولہ باری اور فائرنگ کا سلسلہ جاری ہے۔ آج ایک بار پھر بھارتی فوج نے سیالکوٹ چارواہ سیکٹر میں دھمالہ کے مقام پر بلا اشتعال فائرنگ اور گولہ باری کی جس سے دو شہری شدید زخمی ہو گئے۔ بھارتی جارحیت کا جواب دیتے ہوئے پنجاب رینجرز نے بھرپور کارروائی کی جس کے بعد دشمن کی جانب سے کی جانے والی گولہ باری اور فائرنگ کا سلسلہ رک گیا۔ واضع رہے کہ سیالکوٹ سیکٹر میں ورکنگ باونڈری پر واقع مختلف دیہاتوں پر بھارتی فورسز کی بلا اشتعال فائرنگ کا سلسلہ جاری ہے جس سے دیہاتی گھروں میں محصور ہو کر رہ گئے ہیں۔ ڈی جی رینجرز میجر جنرل خان طاہر جاوید نے بھی علاقے کا دورہ کیا۔ پاکستان اور بھارت کے درمیان ورکنگ باونڈری تقریبا 175 کلومیٹر طویل ہے جس پر درجنوں دیہات واقع ہیں جہاں کے رہنے والے ہمیشہ اِس خوف کا شکار دکھائی دیتے ہیں کہ نہ جانے کب بھارتی فورسز کی طرف سے بلااشتعال فائرنگ اور شیلنگ کا سلسلہ شروع ہو جائے۔ یہ خوف گزشہ کئی روز سے اپنی انتہا کو پہنچا ہوا دکھائی دے رہا ہے کیوں کہ بھارت کی طرف سے اِن دنوں فائرنگ اور شیلنگ میں بہت شدت ریکارڈ کی جا رہی ہے۔ اِس جارحیت کے نتیجے میں متعدد افراد شہید ہو چکے ہیں جبکہ دیہاتیوں کو مالی نقصان کا سامنا بھی کرنا پڑ رہا ہے۔ دیہاتوں سے نقل مکانی کا سلسلہ بھی شروع ہو گیا ہے۔ علاقے کے رہائشیوں کا کہنا ہے کہ عام طور پر فائرنگ کا سلسلہ رات نو بجے کے قریب شروع ہوتا ہے۔ دوسری طرف رینجرز کے حکام کا کہنا ہے کہ پاکستانی فورسز کی طرف سے بھارتی جارحیت کا موثر جواب دیا جا رہا ہے تاہم صورت حال انتہائی کشیدہ ہے۔ دوسری جناب بھارتی وزیراعظم منموہن سنگھ نے چین سے واپسی پر پاکستان پر الزامات کی بوچھاڑ کر دی ہے۔ جنگ بندی کی خلاف ورزی کا الزام عائد کرتے ہوئے بھارتی وزیراعظم کہتے ہیں کہ پاکستان سیز فائر میں ناکام رہا ہے۔