نہ خط لکھوں نہ زبانی کلام تجھ سے رہے
خاموشیوں کا یہی انتقام تجھ سے رہے

رہے بس اتنا شناسائی کا بھرم باقی
اشارتاً ہی دعا و سلام تجھ سے رہے

نہ عہدِ ترکِ تعلق، نہ قربتیں پیہم
بس ایک ربطِ مسلسل، مدام تجھ سے رہے

یہی رہیں ترے نشتر، ترا طریق علاج
اسی طرح غمِ دل کو دوام تجھ سے رہے

نظر میں عکس فشاں ہو ترے جمال کی دھوپ
دیارِ جاں میں سدا رنگِ شام تجھ سے رہے

اب اس سے بڑھ کے مجھے چاہیے بھی کیا آخر
دیارِ فن میں اگر میرا نام تجھ سے رہے