tasneemاسلام آباد(بیورو رپورٹ) ترجمان دفتر خارجہ تسنیم اسلم نے کہا ہے مقبوضہ کشمیر میں بندوق کے زور پر نام نہاد الیکشن حق خودارادیت کا نعم البدل نہیں ، پاکستان کشمیریوں کی سیاسی ، سفارتی اور اخلاقی حمایت جاری رکھے گا ، تسنیم اسلم نے توقع ظاہر کی ہے کہ افغان مہاجرین کی واپسی کے اقدامات جلد مکمل کر لئے جائینگے۔

ترجمان دفتر خارجہ تسنیم اسلم نے دفتر خارجہ میں ہفتہ وار بریفنگ دی ۔ انہوں نے کہا بھارت اپنے سابق وزیر اعظم کے وعدے بھول گیا ہے ۔ بندوق کے زور پر مقبوضہ کشمیر میں نام نہاد الیکشن حق خود ارادیت کا نعم البدل نہیں ہیں ۔ ان کا کہنا تھا ایک لاکھ کشمیری آزادی کی تحریک میں جانیں قربان کر چکے ہیں۔ پاکستان کشمیریوں کی سیاسی ، سفارتی اور اخلاقی امداد جاری رکھے گا ۔ تسنیم اسلم نے بھارت کی سیکورٹی کونسل کی رکنیت کے حوالے سے کہا سیکورٹی کونسل کی مستقل رکنیت کیلئے دو تین ممالک کے بجائے باقی رکن ممالک کے مفاد کا بھی خیال رکھنا چاہئے ۔ ان کا کہنا تھا چین کے صدر ژی جن پنگ رواں برس پاکستان کا دورہ کرینگے۔ دورے کی حتمی تاریخوں کا تعین بعد میں کیا جائیگا۔ دورے سے قبل چین کے وزیر خارجہ پاکستان آئیں گے جس میں دورے کا شیڈول خطے کی صورتحال اور دو طرفہ تعلقات پر بات ہوگی۔ ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا تھا پاکستان ایک دہائی سے افغان مہاجرین کا بوجھ برداشت کر رہا ہے۔ افغان مہاجرین نے دسمبر دو ہزار چودہ تک واپس جانا تھا۔ امید ہے ان کی جلد واپسی کیلئے اقدامات کیے جائیں گے ۔ ترجمان دفتر خارجہ نے بنگلہ دیش میں تعینات پاکستانی سفارتکاروں کی واپسی کو افسوسناک قرار دیا۔