مرے خدا مرے لفظ و بیاں میں ظاہر ہو
اسی شکستہ و بستہ زباں میں ظاہر ہو

زمانہ دیکھے میرے حرف بازیاب کے رنگ
گل مراد ہنر دشت جاں میں ظاھر ھو

میں سخرو نظر آں کلام ہوں کہ سکوت
تری عطا مرے نام و نشاں میں ظاھر ہو

مزہ تو تب ھے جب اہل یقیں کا سر کمال
ملامت سخن گمرہاں میں ظاھر ھو

گزشتگان محبت کا خواب گم گشتہ
عجب نہیں کہ شب آئند گاں میں ظاہر ہو

پس حجاب ہے اک شہسوار وادء نور
کسے خبر اسی عہد زیاں میں ظاہر ہو