جرمن چانسلر انگیلا میرکل کی جماعت کرسچین ڈیموکریٹک یونین سی ڈی یو کی ایک اہم خاتون سیاستدان نے برقعہ پہننے کو نمائش پسندی کے مماثل قرار دیتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ جرمنی میں برقعہ پہننے پر مکمل پابندی لگائی جانی چاہیے۔

جرمن دارالحکومت برلن سے اتوار پانچ جولائی کو موصولہ نیوز ایجنسی ای پی ڈی کی رپورٹوں کے مطابق یہ بات ژُولیا کلوئکنر نے کثیر الاشاعت جرمن روزنامے ’بِلڈ ام زونٹاگ‘ کے ساتھ اپنے آج شائع ہونے والے ایک انٹرویو میں کہی۔ ژُولیا کلوئکنر چانسلر میرکل کی پارٹی کرسچین ڈیموکریٹک یونین یا سی ڈی یو کی وفاقی صوبے رائن لینڈ پلاٹینیٹ کی صدر ہیں۔

ای پی ڈی کی رپورٹوں کے مطابق اس خاتون سیاستدان نے کہا کہ (مسلم خواتین کی طرف سے استعمال کیا جانے والا) مکمل برقعہ پہننا جرمن معاشرے میں ایک دوسرے کے ساتھ مل جل کر رہنے کے بنیادی اصولوں کی خلاف ورزی ہے۔ انہوں نے اخبار ’بِلڈ ام زونٹاگ‘ کو بتایا، ’’یہ ایک کھلا اشارہ ہے کہ ہمارے آزاد معاشرے کو رد کیا جا رہا ہے۔‘‘

ژُولیا کلوئکنر کے مطابق، ’’جو کوئی بھی ہمارے کھلے پن کے مظہر معاشرے کو اتنا ہی برا سمجھتا ہے، اسے کسی نے اس بات پر مجبور تو نہیں کیا کہ وہ اس معاشرے میں لازمی طور پر رہے۔‘‘ کلوئکنر نے اپنے انٹرویو میں مکمل برقعہ پہننے کو نمائش پسندی کے مماثل قرار دیا۔

انہوں نے کہا کہ اس طرح تو ایسے لوگ بھی ہوتے ہیں جو یہ چاہتے ہیں کہ انہیں سڑکوں پر ننگا پھرنے کی اجازت ہونی چاہیے۔ ’’لیکن ہمارے ہاں اس کی بھی اجازت نہیں ہے کیونکہ بات ان دوسرے شہریوں کی بھی ہے جو اسی معاشرے میں رہتے ہیں۔‘‘

ای پی ڈی نے اس قدامات پسند صوبائی سیاستدان کے انٹرویو کا حوالہ دیتے ہوئے مزید لکھا ہے کہ مکمل برقعہ پہننا اس امر کی راہ میں رکاوٹ بنتا ہے کہ آپ کھلے پن کے ساتھ کسی انسان کے چہرے کی طرف دیکھ سکیں۔ کلوئکنر کے مطابق، ’’خواتین کو چھپانا بہرحال ایک ایسی بات ہے جو ہمارےجرمن معاشرے سے مطابقت نہیں رکھتی۔‘‘

ژُولیا کلوئکنر نے، جو وفاقی سطح پر کرسچین ڈیموکریٹک یونین کی نائب سربراہ بھی ہیں، جرمنی میں آباد غیر ملکی تارکین وطن پر زور دیا کہ وہ جرمن معاشرے میں اپنے بہتر سماجی انضمام کی کوششیں کریں۔ انہوں نے کہا، ’’سماجی انضمام کا عمل ایسے ہی ہے، جیسے کسی سے ہاتھ ملانا۔ اگر ہاتھ صرف ایک ہی ہو، تو ایسا کرنا ممکن نہیں ہوتا۔‘‘