پھول خوشبو صبا بن کے رہے کوئی
سانس دھڑکن وفا بن کے رہے کوئی
ہو زمانے میں دھوپ کی شدت جب بھی
تیرے سر پہ گھٹا بن کے رہے کوئی